تیری میری اک جندڑی

طلوع - ارشاد احمد عارف

09 اکتوبر 2018

teri meri ik jindari

میاں شہباز شریف Shehbaz Sharif کی گرفتاری پر مسلم لیگ (ن) سے زیادہ پیپلز پارٹی تکلیف میں ہے۔ بلاول بھٹو Bilawal Bhutto زرداری سے لے کر سید خورشید شاہ Khursheed Shah تک ہر خوردو کلاں نے مذمت کی‘ بات قابل فہم ہے اگر میاں شہباز شریف Shehbaz Sharif ایسا نسبتاً بہتر امیج کا حکمران قانون کی گرفت میں آ گیا تو جن کی شہرت ہی مسٹر ٹین پرسنٹ سے شروع‘ مسٹر ہنڈرڈ پرسنٹ پہ ختم‘ وہ کیوں کر بچ رہیں گے‘ بکرے کی ماں کب تک خیر منائیگی۔ میاں شہباز شریف Shehbaz Sharif پر الزام اختیارات سے تجاوز‘ اداروں میں مداخلت اور من پسند افراد کو فائدہ پہنچانے کا ہے‘ مگر پیپلز پارٹی کی بالائی قیادت الاّ ماشاء اللہ اربوں کی کرپشن‘ لوٹ مار اور لاقانونیت میں ملوث ہے صرف سندھ کے دس سالہ ترقیاتی پروگرام کا آڈٹ ہو تو وہ کچھ سامنے آئے کہ الامان والحفیظ کسی بتکدے میں بیاں کروں تو کہے صنم بھی ہری ہری‘ آج اگر مسلم لیگی قیادت احتساب کی زد میں ہے تو پیپلز پارٹی کی خوش گمانی زیادہ دیر برقرار نہیں رہ سکتی۔ یہی بات مسلم لیگی قیادت پیپلز پارٹی کو سمجھانے کی کوشش کر رہی ہے ؎ میں آج زد پہ اگر ہوں تو خوش گماں نہ ہو چراغ سب کے بجھیں گے ہوا کسی کی نہیں میاں شہباز شریف Shehbaz Sharif کو پہلی بار نیب نے اس وقت طلب کیا جب پنجاب میں ان کا طوطی بولتا تھا‘ بااختیار وزیر اعلیٰ تھے اور حکمران جماعت کے صدر۔ مرکز میں شاہد خاقان عباسی وزیر اعظم Prime Minister تھے اور احسن اقبال وزیر داخلہ۔ اگر احد چیمہ اور فواد حسن فواد کی گرفتاری سے بھی وہ مستقبل کا حال جان نہیں پائے تو قصور اُن کا ہے کسی اور بالخصوص تحریک انصاف کا نہیں۔ پاکستان Pakistan میں پہلی بار قانون کی حکمرانی کا تصور فروغ پا رہاہے اور وزیر اعظم Prime Minister ‘ وزیر اعلیٰ‘ وزیر اور اعلیٰ سرکاری حکام عدالتی کٹہرے میں کھڑے اپنی صفائیاں پیش کر رہے ہیں ۔نیب اگر طاقتور اور بااختیار ادارے کے طور پر اپنا وجود منوا رہا ہے اور اختیارات سے تجاوز اور قومی وسائل کے ضیاع پر بڑے مگرمچھ قانون کی گرفت میں آ رہے ہیں تو عشروں سے بلا تفریق و امتیاز احتساب کے خواب دیکھنے والے اس ملک کے مظلوم و بے کس عوام خوش ہیں‘ انہیں مفاد پرست سیاسی اور مراعات یافتہ صحافتی اشرافیہ کا واویلا ’’روندی یاراں نوں لے لے ناں بھراواں دا‘‘ نظر آتا ہے عشروں سے لوٹ مار کے کاروبار میں شریک عوام کے یہ غم خوار اور جمہوریت کے علمبردار‘ نواز شریف Nawaz Sharif کے غم میں دبلے ہو رہے ہیں نہ شہباز شریف Shehbaz Sharif کی پاکدامنی انہیں خون کے آنسو رلا رہی ہے۔ دستر خوانی قبیلے کو اپنا راشن پانی بند ہونے کا اندیشہ ہے اور اپنے کرتوتوں کی فکر کہ احتساب کی یہ چکی کہیں گیہوں کے ساتھ گھن کو بھی پیسنا شروع نہ کر دے۔عمران خان Imran Khan اور نیب نے کرپٹ حکمرانوں کی دم پرپائوں رکھا مگر تلملا صحافتی بزر جمہر رہے ہیں سیاست اور صحافت کا یہ حسین ملاپ ؟ تیری میری اک جندڑی ‘تینوں تاپ چڑھے تے میں ہُونگاں کوئی بھی انصاف پسند شہری کسی بے قصور کی پگڑی اچھالنے کے حق میںہے نہ نیب کے سیاسی استعمال کا آرزو مند۔ لیکن یہ بے ہودہ منطق بھی ہرگز قابل قبول نہیں کہ حکومت نے اپنی ناکامیوں پر پردہ ڈالنے اور ضمنی الیکشن جیتنے کے لیے نیب کو میاں شہباز شریف Shehbaz Sharif کی گرفتاری پر مجبور کیا۔ عقل و دانش کے یہی قطب مینار عام انتخابات سے قبل میاں نواز شریف Nawaz Sharif اور مریم نواز Maryam Nawaz کی گرفتاری کو مسلم لیگ کی انتخابی کامیابی کا پیشہ خیمہ اور اسٹیبلشمنٹ کی ناکامی کا ثبوت قرار دیا کرتے‘ ہمدردی کے ووٹ کا شوشہ بھی چھوڑا گیا جو 25جولائی کو پانی کا بلبلہ ثابت ہوا۔ پہلے کسی نے پوچھا نہ اب کوئی سوال کر سکتا ہے کہ عام انتخابات تک میاں شہباز شریف Shehbaz Sharif آزاد تھے‘ مسلم لیگ انتخاب نہ جیت سکی‘ اگر میاں نواز شریف Nawaz Sharif کی اسیری ناکامی کا سبب تھی تو اب وہ آزاد ہیں ضمنی الیکشن ہارنے کا خوف کیوں؟ کم از کم مجھے یقین ہے کہ اگر میاں شہباز شریف Shehbaz Sharif بے قصور ہیں تو کوئی نیب اور کوئی حکومتی ادارہ ان کا بال بیکا نہیں کر سکتا اور عدلیہ سے انہیں انصاف ملے گا۔نیب کی حوالات میں فرصت اور تنہائی کے جو لمحات انہیں میسر ہیں ان سے فائدہ اٹھا کر میاں صاحب اپنی ذات اور طرز حکمرانی کا محاسبہ کر سکتے ہیں؟ کہاں کہاں انہوں نے غلطیاں کیں اور دس سالہ بلا شرکت غیرے دور اقتدار میں وہ تعلیم‘ صحت‘ روزگار اور سماجی انصاف کے شعبوں میں انقلابی تبدیلی کیوںنہ لا سکے۔ مسلم لیگ کی قیادت اپوزیشن جماعتوں کو ساتھ ملا کر احتجاج کی جو حکمت عملی ترتیب دے رہی ہے وہ کامیابی سے ہمکنار اس لیے نہیں ہو سکتی کہ حکومت کو آئے صرف ڈیڑھ ماہ ہوا ہے۔ عمران خان Imran Khan کے ووٹر اور سپورٹر پرعزم و پرجوش ہیں اور اپوزیشن کے حمائتی شکستہ دل و مایوس‘ قومی ادارے سیاسی و ملکی استحکام چاہتے ہیں اور علاقائی حالات انتشار و افراتفری کے حق میں نہیں۔ ایسے میں اگر مسلم لیگ ن نے اپوزیشن کی دوسری جماعتوں کو ساتھ ملا کر سڑکوں پر آنے کی کوشش کی تو مزید گرفتاریوں اور احتساب کے عمل میں تیزی کے سوا کچھ حاصل نہ ہو گا۔ احتجاجی سیاست کا فائدہ بھارت India کو ہو سکتا ہے یا پاکستان Pakistan میں عدم استحکام کی خواہش مند دیگر قوتوں کو‘ اپوزیشن کو ہرگز نہیں کہ اس کے پاس احتجاج کا اخلاقی و سیاسی جواز ہے نہ سیاسی کارکن ذہنی طورپر یکسو ہیں نہ عوام کرپشن کے قطب میناروں سے ہمدردی رکھتے ہیں اور نہ حکومت اتنی کمزور و بے بس ہے کہ وہ عوامی تائید و حمائت سے محروم ایک مفاد پرست ٹولے کے ہلّے گلے کو کنٹرول نہ کر پائے۔ بجا کہ میاں نواز شریف Nawaz Sharif کی ضمانت پر رہائی سے مسلم لیگ کے عقابوں کو حوصلہ ملا اور اب وہ ایڑیاں اٹھا کر میاں نواز شریف Nawaz Sharif سے میدان میں نکلنے اور احتجاجی تحریک برپا کرنے کی فرمائش کر رہے ہیں مگر انہیں شائد علم نہیں کہ اب ملک میں شاہد خاقان عباسی کی حکومت ہے جو سرکاری وسائل میاں صاحب کے کاررواں کے لیے وقف کرے گی نہ پنجاب میں ’’پنجاب سپیڈ‘‘ کا راج کہ پٹواری اور بلدیاتی اداروں کے ملازمین استقبالی ہجوم کا حصہ ہوں گے جبکہ نیب اور قانونی اداروں میں گھسے شریف خاندان کے خیر خواہوں اور وظیفہ خواروں کا مکّو ٹھپنے کی خاطر خواہ حکمت عملی ترتیب دی جا چکی ہے۔ یہ فیصلہ وہاں ہوا ہے جہاں اٹل فیصلے کئے جاتے ہیں۔ غضب خدا کا فالودہ فروش‘ خاکروب اور سکول ٹیچر کے اکائونٹس سے اربوں روپے برآمد ہو رہے ہیں اور منی لانڈرنگ Money laundering کے مکروہ کاروبار نے ملک کی چولیں ہلا دی ہیں مگر اپوزیشن احتساب کا عمل روکنے کے لیے احتجاجی تحریک کی دھمکیاں دے رہی ہے۔ مسلم لیگ ن ممکن ہے پیپلز پارٹی کو یہ پٹی پڑھانے میں کامیاب رہے کہ آج ہم کل آپ کی باری ہے یا شاکر شجاعبادی کے الفاظ میں ؎ بس فرق میعاد دا ہے شاکر میں اج رُناّں توں کل روسیں لیکن پیپلز پارٹی سڑکوں پر نکلی ہے نہ نکلے گی۔ خاص طور پر جبکہ معاملہ شہباز شریف Shehbaz Sharif کا ہے جس شخص کو زرداری صاحب کی پارٹی ووٹ دینے پر آمادہ نہیں اُس کی رہائی کے لیے سڑکوں پر نکل کر احتجاج کرے گی؟ ع ایں خیال است و محال است و جنوں مسلم لیگ کو احتجاج پر اکسانے والے نادان دوست یا دانا دشمن یہ کیوں نہیں سوچتے کہ اس وقت تحریک سے یہ تاثر مزید گہرا ہو گا کہ اپوزیشن حکومت کو عوام کی خدمت سے روکنا چاہتی ہے وہ 50لاکھ گھروں کی تعمیر نہیں چاہتی‘ مہنگائی میں کمی کے حق میں نہیں اور روزگار کی فراہمی کے خلاف ہے جس کا عمران خان Imran Khan وعدہ کر رہا ہے صرف وعد ہ نہیں بعض اقدامات بھی۔مسلم لیگ (ن) کے دوست مشورہ سننے کے عادی نہیں‘ ماننے کا تو سوال ہی پیدا نہیں ہوتا لیکن اگر اللہ تعالیٰ انہیں عقل سلیم دے اور وہ ٹھنڈے دل و دماغ سے سوچنے کی زحمت گوارا کریں تو پیپلز پارٹی کاانجام ان کے لیے مشعل راہ ہے۔ چاروں صوبوں کی زنجیر اور بھٹو کی پارٹی زوال کی اتھاہ گہرائیوں میں تب اُتری جب اس نے اپنی قیادت کی کرپشن‘ اقربا پروری اور خاندانی و موروثی سیاست کا دفاع فرض سمجھا اور عوامی جذبات و احساسات کی پروا نہ کی۔ آج وہی گناہ بے لذت مسلم لیگ کرنے جا رہی ہے‘ 25جولائی کے نتائج سے اس نے سبق نہیں سیکھا شائد خودکشی کا ارادہ ہے ؎ دل پھر طواف کوئے ملامت کو جائے ہے پندار کا صنم کدہ ویراں کئے ہوئے

 150