جائیدادیں اللہ کی امانت، جو کرنا ہے کرلیں ، میڈیکل ایڈوائس پر چلونگا، اسحاق ڈار

03 اکتوبر 2018

Ishqa dar

کراچی (ٹی وی رپورٹ)جیو کے پروگرام ’’آج شاہزیب خانزادہ کے ساتھ‘‘میں گفتگو کرتے ہوئے سابق وزیرخزانہ اسحاق ڈارنے کہا ہے کہ خوشی سے بیرون ملک نہیں بیٹھا،مجھ پر ٹیکس چوری کرنے کا الزام بے بنیاد ہے،میری جائیداد نیلام ہوتی ہے یا نہیں میں میڈیکل ایڈوائس پر چلوں گا، جو کرنا ہے کرلیں میری جائیداد اللہ کی امانت ہے، پیپلز پارٹی کے رہنما خورشید شاہ Khursheed Shah نے کہا کہ پی ٹی آئی PTI کے لوگ نئے ہیں انہیں پبلک اکائونٹس کمیٹی سے متعلق معلوم نہیں ہے، شفقت محمود، عارف علوی اور اعظم سواتی سے اس بارے میں بات کی جاسکتی ہے،پبلک اکائونٹس کمیٹی کا کام کسی حکومت کا براہ راست احتساب کرنا نہیں ہے۔ن لیگ کے رہنما رانا ثناء اللہ نے کہا کہ پنجاب میں حکومت کی تبدیلی کی کوشش کرنا ہمارا حق ہے، پنجاب میں صرف تین ووٹوں کی برتری سے پی ٹی آئی PTI کا وزیراعلیٰ بنا ہے، تین چار ووٹوں سے پنجاب حکومت چل نہیں سکتی ۔سابق وزیرخزانہ اسحاق ڈار نے مزید کہا کہ میں اپنی خوشی سے بیرون ملک نہیں بیٹھا ہوں، برطانیہ میں پاکستان Pakistan کی

طرح جھوٹی میڈ یکل رپورٹیں نہیں بنتی ہیں، میں بیمار ہوں اور روزانہ کی بنیاد پر چیک اپ کرواتا ہوں، میں چھ سال بیرون ملک تھا اس کے باوجود اپنی ہر چیز ظاہر کی، الیکشن کمیشن اور میرے ٹیکس ریٹرنز سے اپنی پسند کی چیزیں اٹھائی گئیں، جے آئی ٹی نے میرے کہنے پر ٹیکس ریٹرنز کا ریکارڈ ایف بی آر سے حاصل کیا ،ظلم کی انتہا ہے کہ ایک طرف ڈکٹیٹر کو پاسپورٹ جاری کیا جارہا ہے دوسری طرف میرا پاسپورٹ کینسل کیا جارہا ہے، میرا پاسپورٹ کینسل ہے میں اب سفر بھی نہیں کرسکتا ہوں۔ اسحاق ڈار نے کہا کہ نواز شریف Nawaz Sharif اور مریم نواز Maryam Nawaz کو میڈیکل ایڈوائس نہیں تھی ان کی اہلیہ اور والدہ بیمار تھیں جبکہ میرا ذاتی میڈیکل ایشو ہے، دنیا کو پتا ہے کن کے ساتھ میرے ایشوزتھے، نیوز لیکس میں صلح کروانا میرا جرم ہے، میں نے دواداروں کی لڑائی ہونے سے بچایا یہ میرا جرم ہے، میرا نہ پاناماپیپرز نہ ہی بیس اپریل کے فیصلے میں نام تھا لیکن اچانک رپورٹ میں جھوٹ پر مبنی میرے تین صفحے لکھ دیئے جاتے تھے۔ اسحاق ڈار کا کہنا تھا کہ جب مجھے صحت اجازت دے گی اور فرعون اپنی فرعونیت سے نکلیں گے میں ضرور اپنے ملک میں آئوں گا، ان سب نے مل کر ملک کیلئے اتنا کام نہیں کیا جتنا میں نے اکیلے کیا ہے، میرے اثاثے اللہ کی امانت ہیں، میں نے پہلے ہی نیت کرلی تھی کہ میرے مرنے کے بعد میرے پیسوں سے یتیم خانہ چلے، یہ جو کرنا چاہتے ہیں کرلیں لیکن پاکستان Pakistan میں یہ پہلا واقعہ ہوگا، مشرف مجھ سے ڈیڑھ سال پہلے سے بیرون ملک ہے کیوں اس کی جائیداد کو نیلام نہیں کیا گیا، مشرف کے پیچھے بڑی طاقتیں ہیں جنہوں نے اسے باہر بھجوایا تھا، میڈیا کو بتانا چاہئے اس ملک میں کیا ہورہا ہے، میں نے ملک کے مفاد میں اپنا منہ بند کیا ہوا ہے، جس دن میں نے حقائق بتائے میری کن سے لڑائی ہے اور مجھے کیوں پھنسایا گیا ہے تو دنیا دیکھے گی، میں بہت صبر سے کام لے رہا ہوں، میں چاہتا ہوں کہ اپنے ملک کے معاملات پر بیرون ملک بیٹھ کر بات نہ کروں کیونکہ ملک میں آکر تو کسی نے مجھے بولنے بھی نہیں دینا ہے، انہوں نے ساری حدیں کراس کردی ہیں، آج انہوں نے جو کیا ہے اللہ تعالیٰ ان سے بدلہ لیں گے، آپ دیکھیں گے کہ یہ لوگ اس کی قیمت دنیا میں ہی ادا کریں گے، مشرف بھی قیمت ادا کررہا ہے، میری جائیداد نیلام ہوتی ہے یا نہیں میں میڈیکل ایڈوائس پر چلوں گا، جو کرنا ہے کرلیں میری جائیداد اللہ کی امانت ہے، میرے وکلاء اس معاملہ میں جو بھی قانونی اقدام ہوگا اٹھائیں گے۔ پیپلز پارٹی کے رہنما خورشید شاہ Khursheed Shah نے کہا کہ پی ٹی آئی PTI کے لوگ نئے ہیں انہیں پبلک اکائونٹس کمیٹی سے متعلق معلوم نہیں ہے، شفقت محمود، عارف علوی اور اعظم سواتی سے اس بارے میں بات کی جاسکتی ہے، پبلک اکائونٹس کمیٹی کا کام کسی حکومت کا براہ راست احتساب کرنا نہیں ہے، یہ افتخار چوہدری کی عدالت نہیں کہ جس بات پر چاہو ازخود نوٹس لے لو، پبلک اکائونٹس کمیٹی میں حکومت کی اکثریت ہوتی ہے، ہم نے پی اے سی میں 2017ء تک کا بیک لاک نکال دیا ہے اب صرف 2018ء باقی ہے، اس کے بعد تحریک انصاف کی حکومت کا آڈٹ شروع ہوجائے گا شاید وہ خود کو آڈٹ سے بچانا چاہتے ہیں، پی ٹی آئی PTI کو ڈرنا نہیں چاہئے آڈٹ ہم نہیں آڈیٹر جنرل آف پاکستان Pakistan کریں گے، پیپلز پارٹی نے چوہدری نثار کو پی اے سی کا چیئرمین بنادیا تھا تو شہباز شریف Shehbaz Sharif کا تو مسئلہ ہی نہیں ہے، پی اے سی کا چیئرمین اپوزیشن لیڈر ہوتا ہے اب اپوزیشن لیڈر شہباز شریف Shehbaz Sharif ہیں تو ہم کچھ نہیں کرسکتے۔خورشید شاہ Khursheed Shah کا کہنا تھا کہ ن لیگ نے اسٹینڈنگ کمیٹیوں میں نہ بیٹھنے کی دھمکی نہیں دی اصل میں یہ میں نے کہا ہے، ن لیگ نے مجھ سے بات کی تھی میں نے کہا ہم کسی بھی کمیٹی میں نہیں بیٹھیں گے، اپوزیشن اس پر کوئی سمجھوتہ نہیں کرے گی، پیپلز پارٹی نے پی اے سی کا لیڈر اپوزیشن سے لینے کی جو روایت قائم کی تھی اس سے پیچھے نہیں ہٹے گی۔ن لیگ کے رہنما رانا ثناء اللہ نے کہا کہ رانا مشہود کا بیان ان کا خام خیال ہے، رانا مشہود نے اپنی خواہش کو خبر بنایا جسے میڈیا نے تہلکہ آمیز خبر بنادیا، رانا مشہود نے جس طرح کا بیان دیا اس قسم کے مذاکرات کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ، نواز شریف Nawaz Sharif کی قیادت میں یہ چیزیں ہونا ہوتیں تو پہلے ہی ہوجاتیں، ن لیگ میں کبھی اس قسم کی بات نہیں ہوئی ہے، الیکشن میں دھاندلی کا معاملہ شہباز شریف Shehbaz Sharif کے ذریعہ ہی اسمبلی میں اٹھایا گیا، دھاندلی پر پارلیمانی کمیشن نہ بنتا تو پارلیمنٹ کے اندر اور باہر احتجاج کرتے، ن لیگ کے پاس الیکشن میں دھاندلی کے ٹھوس شواہد ہیں جنہیں پارلیمانی کمیشن میں پیش کریں گے۔ رانا ثناء اللہ کا کہنا تھا کہ پنجاب میں حکومت کی تبدیلی کی کوشش کرنا ہمارا حق ہے، پنجاب میں صرف تین ووٹوں کی برتری سے پی ٹی آئی PTI کا وزیراعلیٰ بنا ہے، تین چار ووٹوں سے پنجاب حکومت چل نہیں سکتی ہے، پنجاب کابینہ میں وزراء کی اکثریت کا پی ٹی آئی PTI سے کوئی تعلق نہیں ہے،اس صورتحال پر پنجاب میں پی ٹی آئی PTI کے پرانے لوگ بہت ڈسٹرب ہیں، فیصل آباد ڈویژن سے پانچوں ارکان اسمبلی کو وزیر بنادیا گیا، ان وزیروں کو اختیار نہیں ملے گا اور توقعات پوری نہیں ہوگی تو پھر وہ کسی کی نہیں سنیں گے۔

 71