آئی ایم ایف کا کیا کیا جائے

دیوار پہ دستک - منصور آفاق

17 جنوری 2020

آئی ایم ایف کا کیا کیا جائے

آئی ایم ایف کی شرائطِ محبت، ہائے ہائے: بینکوں کا انٹرسٹ ریٹ سوا تیرہ فیصد، اجازت کے بغیر کسی اور سے لین دین نہیں یعنی دوسری شادی کے لئے پہلی بیوی کا اجازت نامہ ضروری ہوگا۔ ڈالرکی دوشیزہ کے ریٹ سے بھی کوئی چھیڑ چھاڑ نہیں ہوگی۔ تعلق کی شرائط خاصی سخت تھیں مگر ہم مجبوروں کو کہنا پڑا جن پر آزادی کی ناحق تہمت ہے کہ سرِ تسلیم خم ہے جو مزاجِ یار میں آئے۔

اِس وقت ہمیں تیسری قسط لینی ہے پھر چار حکم نامے جاری کیے ہیں۔ پہلاحکم:حکومت 30؍جنوری تک پرائیویٹ پاور کمپنیوں کو پوری پیداواری صلاحیت کے مطابق چلانے کی پابند ہو گی۔ سالانہ کپسیٹی چارجز کا 25فیصد بجلی بلوں میں شامل کیا جائے گا۔ گیس کی قیمت میں 21.4فیصد اضافہ کیا جائے گا۔ دوسراحکم:حکومت 28فروری تک اپنی آمدنی، اخراجات اور بچت پارلیمنٹ میں پیش کرنےکی پابند ہوگی۔ تیسرا حکم: حکومت 31مارچ تک اسٹیٹ بینک کو آئینی طور پر خود مختار کردے گی۔ خسارے کے چکر میں نئے نوٹ نہیں چھاپے جا سکیں گے۔ چوتھا حکم:ایف اے ٹی ایف پلان پر عمل کرانے والے بین الاقوامی اداروں پر بینک سیکریسی قوانین لاگو نہیں ہوں گے۔

دنیا کے 189ممالک آئی ایم ایف کی محبت میں گرفتار ہیں۔ان میں سے کچھ عشاق ترقی یافتہ ہیں اور کچھ کاسہ بدست، جن کے دلوں میں صرف ترقی کی تمنا ہے۔ یہ دوشیزۂ زر اُن سب عشاق کی مالیاتی کارکردگی کی نگرانی فرماتی ہے۔ بدحال اور بحران زدگان کو قرضے اور تکنیکی معاونت فراہم کرتی ہے۔ بہر حال یہ طے شدہ بات ہے کہ پاکستان Pakistan کا شمار اول الذکر میں نہیں ہوتا۔ ہم نے بھی مجبوراً اس محبت کی بیڑیاں پہن رکھی ہیں کہ کہیں اہلِ زر ہمارا دیوالیہ نہ نکال دیں۔ ہم اب تک کئی بار آئی ایم ایف سے قرض لے چکے ہیں۔

آئی ایم ایف کے قرض دو طرح کے ہیں۔ ایک جنرل ریسورس اکائونٹ کے تحت قرضہ جات۔ یہ صرف امیر ممالک کو ملتے ہیں دوسرا، پی آر جی ٹی کے تحت قرض، یہ غریب ممالک کے لئے ہیں۔ ان کی شرح سود کم ہوتی ہے مگر اس کے باوجود دیکھنے میں یہی آیا ہے کہ یہ قرض غریب ممالک کو معاشی طور پر مفلوج کردیتے ہیں۔ شرائط کچھ ایسی ہوتی ہیں کہ ان قرضوں کی واپسی مشکل ہو جاتی ہے۔ جو شرائط نامہ قرض خواہوں کے ہاتھ میں تھمایا جاتا ہے اس میں بظاہر تو ایسے اقدامات کرنا ہوتے ہیں جو ملک کو معاشی طور پر مستحکم کریں مگر تاریخ کے اوراق گواہ ہیں کہ یہ قرض وقتی سہارا ضرور بنتے ہیں مگر بعد میں شدید ترین بحرانوں میں مبتلا کردیتے ہیں۔ احمد ندیم قاسمی نے کہا تھا:

بے وقار آزادی، ہم غریب ملکوں کی

تاج سر پہ رکھا ہے، بیڑیاں ہیں پاؤں میں

معشوقۂ زر کے پالیسی میکرز کی تشکیل کردہ پالیسیوں اور پروگراموں کی بیڑیاں پہنے بغیر کوئی اُس کی بزم میں نہیں جا سکتا۔ افسوس کہ ہر قسط کے ساتھ اُس طرف سے چند نئی تجاویز کے نام پر حکم نامے جاری ہوتے ہیں۔ جنہیں سسکتی اور بلکتی عوام کے قتل نامے کہا جائے تو غلط نہ ہوگا۔ اِس روشنی سے تاریکیاں اور بڑھ جاتی ہیں۔ خوشحالی کے نام پر بدحالیوں کے پھاٹک کھل جاتے ہیں۔ وہی جو حضرت غالبؔ کے ساتھ ہوا تھا، وہی ہونے لگتا ہے اور ہم بھی غالبؔ ِخوش فہم کی طرح کہتے ہیں:

قرض کی پیتے ہیں مے لیکن سمجھتے ہیں کہ ہاں

رنگ لائے گی ہماری فاقہ مستی ایک دن

اس وقت ہم ہندو بنیے کے سُود جیسے قرضےمیں گردن گردن تک ڈوبے ہوئے ہیں۔ بلاشبہ موجودہ حکومت کو اس بات کا پورا احساس ہے۔ عمران خان Imran Khan نے اقتدار میں آنے کے بعد پوری کوشش کی کہ آئی ایم ایف کے پاس نہ جانا پڑے مگر اُس کی زلفوں کے گرفتار اتنی آسانی سے کہاں اُس کے پیچوں سے نکل سکتے ہیں۔ کوئی رستہ نہ ملا تو اُسی ظالم کے پاس جانا پڑا۔ کچھ ایسی شرائط بھی ماننا پڑیں جو کا غذ پر تحریر نہیں کی جا سکتیں۔

پاکستان Pakistan کے آئی ایم ایف سے مراسم خاصے پرانے ہیں۔ لین دین کا ایک طویل سلسلہ ہے۔ ایک لمبی شبِ وصال ہے۔ مثلاً 1958سے 1977کے درمیان یہ وصل کی رات چند ساعتوں پر مشتمل تھی۔ 1980سے 1995کے دوران پاکستان Pakistan آئی ایم ایف کے 7پروگراموں سے جڑارہا، ان قرضوں میں زیادہ تر کی واپسی کا دورانیہ ایک سے دو سال تھا۔ 1997سے 2013میں آئی ایم ایف سے 6.4ملین کا قرض لیا گیا، 6مختلف پروگراموں کے تحت ،ان پروگراموں کی میعاد تین سال تھی۔ ان میں زیادہ ترقرضے بیل آؤٹ پیکجز یا اسٹینڈ بائی معاہدے تھے۔ اس ہولناک وصال کی تاریخ بڑی لمبی ہے۔اس کا ذکر پھر کسی وقت۔ اس وقت مسئلہ گلے میں پھنسی ہوئی ہڈی کا ہے جنہیں عرف عام میں شرائط کہا جاتا ہےکہ ڈالر کا ریٹ اور بڑھایا جائے۔ پٹرول، گیس، بجلی اور اشیائے خورونوش کی قیمتوں میں 30فیصد تک اضافہ کیا جائے۔ پی آئی اے اور اسٹیل ملز جیسے اداروں کی فوری طور پر پرائیویٹائزیشن کی جائے۔ ایف اے ٹی ایف کے تحت مزید کارروائیاں کی جائیں۔ مختلف اشیاء اور مختلف کاموں میں دی جانے والی سبسڈی ختم کی جائے۔ اگرچہ عمران خان Imran Khan نے کہا کہ دوہزار بیس خوشحالی کا سال ہے مگر آئی ایم ایف کے دامِ ہم رنگ زمین کو دیکھ کر لگتا نہیں کہ سورج کو نکلنے دیا جائے گا۔

 215