دھرنے کے آفٹر شاکس

بین السطور - صابر شاکر

15 نومبر 2019

Afternoon Shock of the Sit

دھرنے میں کس نے کیا کھویا کیا پایا؟ مولانا کے اسلام آباد Islamabad سے جانے سے کیا حکومت کے لیے خطرات ٹل گئے ہیں یا دھرنے کے آفٹر شاکس دھرنے سے زیادہ خطرناک ہوسکتے ہیں ؟ کیا حکومت دھرنے کے نتیجے میں مضبوط ہوئی یا کمزور؟ کیا عمران خان Imran Khan کی وزارتِ عظمیٰ اور پارلیمنٹ پانچ سال پورے کرپائیں گے یا پھر دونوں کو ہی قبل از وقت جانا ہو گا؟ یا یہ کہ صرف عمران خان Imran Khan کو جانا ہوگا اور پارلیمنٹ اپنی مدت پوری کرے گی ؟ یہ وہ سوالات ہیں جوسب کے ذہنوں میں گونج رہے ہیں۔مولانا وزیراعظم سے استعفیٰ لینے اور ان کی حکومت گرانے کا یک نکاتی مطالبہ لے کر میدان میں اُترے تھے‘ انہیں اس وقت بھی بڑی سیاسی جماعت پیپلزپارٹی کی حقیقی حمایت حاصل نہیں تھی‘ مسلم لیگ (ن) البتہ دو کشتیوں میں سوار تھی‘ ایک گروپ مولانا کے ساتھ تھا اور دوسرا گروپ دوسری جانب معاملات طے کرنے میں لگا ہوا تھا ‘جس کا نتیجہ یہ نکلا کہ مولانا بھی ناراض ہوگئے اوران کے معاملات بھی تاحال پھنسے ہوئے ہیں۔البتہ پیپلزپارٹی سوائے بلاول کی ایک تقریر کے‘ جو انہوں نے کنٹینر پر کی ‘ دوبارہ نظر نہیں آئی۔ پھر مولانا نے اپنے پلان بی کی حمایت کے لیے رہبر کمیٹی کے ذریعے حمایت حاصل کرنے کی کوشش کی‘ لیکن بڑی اپوزیشن جماعتوں نے مولانافضل الرحمن کا ساتھ دینے سے صاف انکار دیا۔حکومت کی مذاکراتی ٹیم اور رہبر کمیٹی کے درمیان مذاکرات ناکام ہوئے تو حکومت کی اتحادی جماعت مسلم لیگ (ق) کی قیادت کو میدان میں اتارا گیا۔چوہدری شجاعت حسین اور چوہدری پرویزالٰہی کی کاوشیں بھی مولانا کو دھرنا ختم کرانے میں اہم رہیں۔

مولانا نے دھرنے کے بارہ روز میں ہر طرح کی دھمکیاں دیں‘ لاشیں اٹھانے کی خوفناک تصویر کشی کی گئی‘ اداروں کو دھمکایا گیا‘ حساس موضوعات کو چھیڑا گیا‘مذہبی کارڈ بھی کھیلا گیا‘پاور پلیئرز کو للکارا گیا ‘لیکن سوائے پی ٹی آئی PTI کے سب نے صبراور نظم و ضبط کا مظاہرہ کیا اور ہر الزام کا جواب دلیل کے ساتھ مولانا کو دیا گیا۔شہباز شریف Shehbaz Sharif اور پیپلز پارٹی نے بھی جلتی پر تیل کا کام نہیں کیا۔مولانا آخری وقت پر بھی دھرنا وفاقی دارالحکومت میں برقرار رکھتے ہوئے پلان بی پر جانا چاہتے تھے‘ لیکن عین وقت پر چوہدری شجاعت اور پرویز الٰہی نے مولانا کے گھر جا کر ان کے کان میں کوئی ایسی بات کی کہ مولانا نے فوری طور پر اپنا ارادہ بدلا اور دھرنا ختم کرنے کا اعلان کردیا۔مولانا اور چوہدری صاحبان کی ملاقاتیں تاحال جاری ہیں‘ جو حکومت کے لیے ہرگز اچھی نہیں ہیں۔

مولانا کا دھرنا ختم ہو چکا ہے‘ لیکن وہ خود اسلام آباد Islamabad میں موجود ہیں اور مطمئن دکھائی دیتے ہیں۔دھرنے کے اُٹھ جانے پر وزراشادیانے بجارہے ہیں۔ان کی یہ خوشی فی الوقت درست بھی ہے ‘لیکن اس خوشی اور مولانا کے دھرنے کے ختم ہونے میں پی ٹی آئی PTI کا کوئی کمال نہیں ہے ‘بلکہ یہ خوشی بڑی اپوزیشن جماعتوں ‘خاص طور پر پیپلزپارٹی‘ کی مرہون منت ہے‘ جن کے اصولی موقف‘ سیاسی پختگی اور جمہوریت پر گہرے یقین نے دھرنے اور جتھے کے ذریعے حکومت گرانے کے طریقہ کار کی شدیدمخالفت کی اور پارلیمنٹ کے معاملات پارلیمنٹ کے اندر پارلیمنٹ کے ذریعے ہی حل کرنے پر مُصر رہیں۔ دوسرا کریڈٹ پاور پلیئرز کو جاتا ہے‘ جنہوں نے تمام طعن وتشنیع کے باوجود اپنا وزن اپوزیشن کے پلڑے میں نہیں ڈالا۔

آزادی مارچ سے کافی عرصہ پہلے مولانا نے سپہ سالار سے ملاقات بھی کی اور مولانا نے خود ہی اس ملاقات کے بارے میں اپنے ہم خیال اور قریبی دانشوروں کو آنکھیں گھما گھما کر آگاہ کیا۔مولانا نے سپہ سالار سے حکومت کے خلاف مدد مانگی اور انہیں آمادہ کرنے کی کوشش کی لیکن سپہ سالار نے اس ملاقات میں مولانا کو ایسا کوئی بھی قدم اٹھانے سے باز رہنے کا کہا جس سے ملک عدم استحکام کا شکار ہو اور ایسی صورتحال سے دشمن ممالک فائدہ اٹھائیں۔سپہ سالار نے جمہوریت کے ساتھ غیر متزلزل وابستگی اور اپنے آئینی کردار پر قائم رہنے کا عزم کیا۔مولانا کی یہ ملاقات بالکل اسی نوعیت کی تھی جیسا کہ عمران خان Imran Khan اور ڈاکٹر طاہرالقادری نے اپنے دھرنوں کے دوران اس وقت کے سپہ سالار جنرل راحیل شریف سے ملاقات کرکے نواز حکومت گرانے کے لیے مدد مانگی تھی لیکن جنرل راحیل شریف نے بھی ایسی کوئی مدد کرنے سے نہ صرف انکار کردیا تھا بلکہ ماورائے آئین کوئی قدم اٹھانے کی بھی نفی کردی تھی۔ جس کے بعد مایوس ہوکر علامہ قادری نے دھرنا سمیٹ دیا تھا اور پورے ملک میں پھیلنے کا پلان بنایا تھا لیکن وقت گزرنے کے ساتھ وہ سیاست سے ہی ریٹائر ہوگئے۔جنرل باجوہ کے انکا ر کے باوجود مولانا فضل الرحمن کی ملاقات مولانا کو اپنے حتجاج کا پروگرام ملتوی کرانے میں ناکام رہی۔مولانا اور سپہ سالار اس ملاقات کے مندرجات کے امین ہیں‘ اگر وہ لب کشائی نہیں کررہے تو پھر اس بارے میں زیادہ قیاس آرائی مناسب نہیں۔

دوسری جانب گیم چینجرشہباز شریف Shehbaz Sharif نے انتہائی خاموشی اور برق رفتاری سے جو کْچھ حاصل کیا تھا اسے کسی کی نظر لگ گئی اور شریف فیملی کے سوشل میڈیا پر جشن ِفتح کے پیغامات نے ان سنسرز کو بھی آن کردیا جن کی پہنچ سے دور یہ معاملات کامیابی کے قریب پہنچے تھے۔ رہا سہا کام خواجہ آصف کی قومی اسمبلی میں اس تقریر نے کردیا جس میں انہوں نے وسط مدتی انتخابات کی نوید اور حکومت کو خطرے کا طعنہ دے مارا۔ اس تقریر کے بعد عمران خان Imran Khan نے اپنے معتمد خاص اور ان کی سفارش پر تعینات ان کے دستِ راست افسر کی بے خبری پر ان کی اچھی خاصی ڈانٹ ڈپٹ کی۔جس کے بعد وزیراعظم نے حتمی طور پر معاملات اپنے ہاتھوں میں لے لیے اور جو کچھ کرسکتے تھے وہ انہوں نے کردکھایا اور مزید کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔عمران خان Imran Khan کو بھی ان کے'' چوہدری نثار‘‘ مشورہ دے رہے ہیں کہ آپ بھڑوں کے چھتے میں ہاتھ نہ دیں اور گرم پانیوں اور آگ کے گولوں کے قریب نہ جائیں‘ لیکن عمران خان Imran Khan فرنٹ فٹ پر جارحانہ کھیل کھیلنا چاہتے ہیں‘ تاکہ وہ اپنا ووٹ بینک اور اپنا بیانیہ برقرار رکھتے ہوئے آئندہ الیکشن لڑ سکیں۔ عمران خان Imran Khan صاحب کو جاری سیاسی کھیل کا اندازہ ہوچکا ہے‘ اس لیے وہ اب مزید وزن اٹھانے کے موڈ میں نظر نہیں آتے ‘یہاں تک کہ اگر نئے مینڈیٹ کے لیے جانا پڑے تو وہ اس کے لیے بھی تیار نظر آتے ہیں۔ مولانا ‘پیپلزپارٹی‘ مسلم لیگ (ن) اور خاص طور پر خواجہ آصف کا بیک وقت مطمئن نظر آنا اور ڈی جی آئی ایس پی آر کا یہ کہنا کہ پاک فوج Pakistan Army کسی پارٹی کے ساتھ نہیں ہے اور ہر جمہوری اور آئینی حکومت کے ساتھ ہوتی ہے‘ سے بہت کچھ واضح نظر آ رہا ہے۔ محسوس یہ ہوتا ہے کہ آنے والے دو سے چار ماہ کے دوران ایسی سیاسی ڈویلپ منٹس ہوسکتی ہیں کہ جن سے پہلا چیلنج عمران خان Imran Khan کی وزارت عظمیٰ کو ہو سکتا ہے‘ کیونکہ وزارت عظمیٰ محض نو ووٹوں کے قلیل اور بیگانے سہارے پر کھڑی ہے۔چوہدری شجاعت حسین کے بیانا ت معنی خیز بھی ہیں اور پیغام بھی۔دو اتحادی جماعتوں کے الگ ہونے سے نو ووٹوں کا فرق ختم ہوجاتا ہے اور کھیل اپوزیشن کے پاس جا سکتا ہے‘ لیکن دوسرا خطرہ خان صاحب کا جارحانہ مزاج ہے‘ جس کی وجہ سے وہ خود بھی نئے انتخابات کی طرف جاسکتے ہیں۔دھرنے اور نواز شریف‘ دونوں نے شک کا بیج بو دیا ہے‘ اس کی آبیاری کتنی جلد ہوسکتی ہے اس کا انحصار پاور پلیئرز کے موڈ پرہے اور کم سے کم تمام اپوزیشن جماعتیں وسط مدتی انتخابات پر متفق نظر آتی ہیں جو کہ ایک جمہوری اور سو فیصد آئینی مطالبہ ہے۔ عمران خان Imran Khan اپنی وزارت عظمیٰ کے پانچ سال پورے کرلیں تو یہ پاکستان Pakistan کی تاریخ کا پہلا سیاسی معجزہ ہوگا۔

 180