پاکستان Pakistan کا خستہ حال تعلیمی نظام !!!!!

Hamza Meer

14 ستمبر 2019



پاکستان Pakistan کا خستہ حال تعلیمی نظام !!!!!

تحریر حمزہ میر !!!!!

جن قوموں نے دنیا میں کامیابی حاصل کی ہے وہاں تعلیمی نظام بہت اچھا ہے اور یکساں تعلیمی نظام ہے. میرا اشاره یورپی ممالک ہیں جنہوں نے تعلیمی میدان میں بہت اہم کامیابیاں حاصل کیں اور بہت سی چیزیں دریافت کیں, ان تمام چیزوں کے پیچھے ایک مضبوط تعلیمی نظام تو ہے لیكن یکساں نظام ہے. امیر کا بچہ اور غریب کا بچہ ایک ہی اسکول یہ کالج میں ایک ہی نصاب پڑھتا ہے. اور اگر چائنیز اور جاپان کی بات کریں تو پتا چلتا ہے کہ ان قوموں نے اپنی زبان میں اپنے لوگوں کو تعلیم دی اور اپنی زبان کو تعلیم کا ایک اہم جز بنایا. لیكن ہمارے ملک پاکستان Pakistan میں افسوس کے ساتھ تعلیم کو کاروبار بنایا ہوا ہے اور اس کے اصل وجہہ یہ ہے کہ ماضی میں ایسا بھی ہوا کہ ان پڑھ شخص کو وزیر تعلیم بنایا گیا پھر تو تعلیم کا حال ایسا ہی ہونا تھا جیسا اب ہے تعلیم کا وزیر تو اسے شخص کو بنانا چاہیے جو خود تعلیم کے محکمے سے وابستہ ہو اور اگر ایک ان پڑھ شخص وزیر ہو گا تو وہ تو خاک کرے گا. تعلیم کے میدان سے وابستہ شخص ہی تعلیم کے شعبے میں تبدیلی لا سکتا ہے کیوں کے وہ جانتا ہے کہ اس میں کس چیز کی کمی ہے اور کیا تبدیلی لانی ہے کیوں کے ہمارا تعلیمی نظام بہت خراب ہے بلکے ختم ہو گیا ہے ایک جیسا تعلیمی نظام ہونا چاہیے تا کے غریب اور امیر کا بچہ ایک ہی نصاب پڑھے اور سرکاری تعلیمی اداروں کی حالت ٹھیک کرنی پڑھے گی کیوں کے عمارات خستہ حال ہو چکی ہیں اور کچھ عمارات کو تو محکما ناکارہ قرار دے چکی ہے پرائیویٹ ادارے تو بچوں سے بہت زیاده فیس وصول کرتے ہیں اور ان کا نصاب بھی بہتر ہے اور دوسری طرف سرکاری اسکول میں تو ٹیچرز بھی نہیں آتے بچوں کو پڑھانا خاک تعلیم ملنی ہے ایسا تعلیمی نظام بنایا جاے جس میں ایک جیسا تعلیمی نصاب ہو اور حکومت وقت کی بھی یہ ذمداری ہے کہ وہ تمام بچوں کو ایک جیسا نصاب دے اور تعلیمی اداروں کو ایسے ٹھیک کرے اور ایسا نظام بناے جس میں لوگ اپنے بچوں کو سرکاری اسکول میں داخل کروایں اور ایک ایسا ادارہ بنایا جاے جو نصاب کہ مطلق ہو اور جو وہ ادارہ نصاب تجویز کرے وہ ہی پڑھایا جاے جعلی ڈگری پیسے دے کر ملتی ہے اور جن لوگوں کو ڈگری ملتی ہے اور جب یہ لوگ اپنی ڈگری لے کر جب فیلڈ میں جاتے ہیں تو وہ اپنے ملک کے لیے شرمندگی کا سبب بنتے ہیں اس کو روکنے کے لیے ایک ایسا سخت قانون بنایا جاے جو ان تمام لوگوں کو ایسی سزا دے کہ یہ لوگ دوسروں کے لیے عبرت کا نشان بنانا پڑھے گا تا کہ آئندہ کوی شخص ایسا نا کر سکے اور نوجوانوں کے فیوچر کے ساتھ آئندہ کوی ایسا نا کر سکے قانون میں ترمیم کر کے تعلیم کے میدان میں سخت قانون بناے جایں تا کہ یہ لوگ سخت سزا کے ڈر سے ایسا سنگین کام نہ کر سكیں اور اگر دنیا میں آگے بڑھنا ہے تو تعلیم کے میدان میں آگے بڑھنا پڑھے گا اور تعلیم کو عام کرنا ہو گا کیوں کے تعلیم ہی آگے بڑھنے کے لیے لازم و ملزوم ہے

 165