کیا بدنصیبی ہے!

اعمال نامہ - ارشاد احمو بھٹی

08 اگست 2019

Kya BadNaseebi hai

کیا بدنصیبی، ایک ڈکلیئرڈ قاتل، ڈکلیئرڈ دہشت گرد، ڈکلیئرڈ انسانیت کا مجرم، ایک انتہا پسند، ایک جنونی، دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت، سیکولر، روشن خیال، لبرل ہونے کے دعویدار ملک کا سربراہ، جس کے امریکہ United States ، یورپ داخلے پر پابندی تھی، آج وہ وزیراعظم، ہر جگہ جا رہا، ہر جگہ استقبال ہو رہے، کہاں گئی مہذب دنیا، کہاں گئی انسانیت، کہاں گئے انسانی حقوق کے بھاشن؟ واقعی یہ مفادات کی دنیا، کیا بدنصیبی، پورا خطہ ایک انسان کے رحم و کرم پر، ڈیڑھ ارب انسانوں پر پاگلوں کا جتھہ راج کر رہا، ڈیڑھ ارب کا ہندوستان پاگل خانے میں ڈھل چکا، ہندوستان سے مسلمانوں کو نکالو، تاریخ سے مسلمانوں کو نکالو، شہروں، دیہات سے مسلمانوں کو نکالو، کتابوں،کہانیوں سے مسلمانوں کو نکالو، مسلم ناموں پر اعتراض، مسلم کاموں پر اعتراض، کیا بدنصیبی، ہندوستان میں مسلم خون سستا، گائے موتر مہنگا، یقین جانئے، مودی کو ایک ٹرم اور مل گئی، بھارتی Indian پارلیمنٹ میں 5فیصد گائے کوٹا ہوگا، نوٹوں پر گائے کی تصویر، مودی کی ایڈوائزر دیس کی سب سے بوڑھی گائے، ’را‘ کی چیف کنسلٹنٹ گائے، شاہ رخ، عامر سمیت مسلم اداکاروں پر یہ پابندی ہوگی کہ سال میں ایک فلم ایسی کریں جس میں ہیروئن گائے، افسوسناک، شرمناک۔

کیا بدنصیبی، مودی جارحیت، حریت کانفرنس کو چھوڑیں، مظلوم کشمیریوں کو رہنے دیں، دلّی سرکار کے اپنے اتحادی پھٹ پڑے، فاروق عبداللہ کہہ رہے ’’ایسے لگا جیسے میرے وجود کے دو ٹکڑے ہو گئے‘‘، محبوبہ مفتی کہہ رہیں ’’بھارت India سے الحاق، دو قومی نظریے کی مخالفت، ہمارا فیصلہ غلط نکلا، ہم نے پاکستان Pakistan پر بھارت India کو ترجیح دی یہ ہماری غلطی‘‘، عمر عبداللہ بولے ’’ہمارے ساتھ دھوکہ ہوگیا‘‘ کانگریس کہہ رہی ’’یہ سیاہ دن، بھارتی Indian اقلیتوں کا قاتل دن، تاریخ ثابت کرے گی کہ یہ بھیانک غلطی‘‘، کیا بدنصیبی، مودی جارحیت، نہرو، پٹیل دستخطی وعدوں پر خطِ تنسیخ پھیر دیا، مہاراجہ ہری سنگھ، بھارتی Indian گورنر جنرل ماؤنٹ بیٹن کے الحاقی معاہدے پر خطِ تنسیخ، بھارتی Indian آئین پر خطِ تنسیخ، 1952کے دلی سمجھوتہ پر خطِ تنسیخ، 1949میں متعارف کردہ آرٹیکل 370پر خطِ تنسیخ، اقوام متحدہ قراردادوں، شملہ معاہدہ پر خطِ تنسیخ، کشمیر واپس 1947کی پوزیشن پر چلا گیا، کیا بدنصیبی، مودی جارحیت، مقبوضہ وادی کی تحریک تیز ہی نہیں بلکہ بھارت India میں چلنے والی 50چھوٹی 17بڑی تحریکوں میں جان پڑے گی، ناگالینڈ، میزورام، منی پور، بھارتی Indian پنجاب، لداخ، کشمیر ہر جگہ شعلے بھڑکیں گے۔

کیا بدنصیبی، مودی جارحیت، جو اسرائیل نے فلسطین میں کیا، وہی مودی کشمیر میں کرنے جا رہا، نریندر مودی narendra modi ، بنیامین نیتن یاہو کی دوستیاں، بھارت، اسرائیل سالہا سال سے ایک، دونوں کا ایجنڈا ایک،مقبوضہ وادی میں اب ہندوؤں کی آبادکاری، مسلمانوں کو اقلیتوں میں بدلنا مقصد، کیا بدنصیبی، مودی جارحیت، آرٹیکل 370کا خاتمہ، فرق یہ پڑا، پہلے جموں وکشمیر خودمختار، اب نہیں، پہلے بھارتی Indian کشمیری شہری نہیں تھا، اب ہر بھارتی Indian کشمیری شہری، پہلے مقبوضہ وادی کا اپنا جھنڈا، ترانہ، آئین، اب یہ سب ختم، پہلے بھارتی Indian شہری کشمیر میں جائیداد، زمین نہیں خرید سکتا تھا، اب ہر بھارتی Indian کشمیر میں جائیداد، زمین خرید سکے گا، اوپر سے لداخ، مقبوضہ وادی سے علیحدہ، مطلب مقبوضہ وادی بھارت India کا ایک صوبہ بن گئی، کیا بدنصیبی، مودی جارحیت، پاکستان Pakistan میں منظم پروپیگنڈا مہم، کوئی سنا رہا، عمران خان Imran Khan امریکی صدر ٹرمپ کے ہاں کشمیر بیچ آئے، کوئی بتا رہا یہ ٹرمپ، مودی، عمران سازش، کوئی کہہ رہا عمران خان، ٹرمپ کارڈ کے چکر میں ٹرمپ کے ٹریپ میں آگئے، کوئی کہہ رہا جس ثالثی کا ٹرمپ کہہ رہے تھے، وہ یہی تو تھی کہ کشمیر دو حصوں میں، اِدھر ہم، اُدھر تم، عجیب و غریب سازشی تھیوریاں، وہ بھی منظم پروپیگنڈوں میں لگے ہوئے، جن کے سینوں پر سول، ملٹری قیادت کے کامیاب دورۂ امریکہ United States کی وجہ سے سانپ لوٹ رہے تھے، جنہیں یہ سب ہضم نہیں ہو رہا تھا، اب موقع ملا، حسد نکال رہے، وہ بھی پروپیگنڈے کر رہے جن کی بقا اسی میں کہ حکومت ناکام ہو، عمران خان Imran Khan کو گندا کیا جائے، وہ بھی پروپیگنڈ ے کر رہے جن کے دماغ ہی سازشی ہو چکے، سوال یہ، اکیلا عمران کشمیر کا سودا کیسے کر سکتا، کیا مقبوضہ وادی میں عمران خان Imran Khan کی حکومت، کیا پاکستان Pakistan کی فوج وہاں لڑ رہی، کیا ٹرمپ ملاقات کے بعد پاکستان Pakistan نے وہاں سے اپنی فوج واپس بلا لی، اگر عمران خان Imran Khan نے کشمیر بیچنا تھا، ٹرمپ نے کشمیر خریدنا تھا،کوئی سازش کرنا تھی تو ایسی کچی سازش کہ اِدھر وائٹ ہاؤس میں سازش ہوئی، اُدھر دوستوں کو پاکستان Pakistan میں پتا چل گیا، سبحان اللہ، پھر علی گیلانی کہہ چکے، عمران پہلا لیڈر جس نے نہتے کشمیریوں کیلئے آواز اٹھائی، یٰسین ملک کی اہلیہ مشعال ملک کہہ رہیں، عمران خان Imran Khan جس طرح کشمیریوں کی مدد کر رہے، میں شکر گزار، مگر کیا کریں حاسدوں کا حسد ایسا کہ جھوٹ، منافقت، افواہیں عروج پر۔

کیا بدنصیبی، کوئی یہ نہ سوچے، جب وائٹ ہاؤس میں عمران، ٹرمپ پریس کانفرنس میں جب ٹرمپ نے کشمیر پر بات کرتے ہوئے یہ کہہ دیا کہ مودی نے مجھ سے کشمیر پر ثالثی کی درخواست کی تھی، تب وہ مودی جس کے انتخابی منشور میں تھا کہ اس بار جیت کر ہم کشمیر کی خصوصی حیثیت آئین کے آرٹیکل 370اور 35اے کا خاتمہ کریں گے، اس پر ایسی تنقید ہوئی کہ اسے ’غدار‘ کہہ دیا گیا، تب جو کام مودی نے ذرا ٹھہر کر کرنا تھا وہ اس نے فوراً کرلیا، اب ہمیں کیا کرنا، ہمیں چومکھی لڑائی لڑنی، اقوام متحدہ کا دروازہ کھٹکھٹانا، دوست ممالک کو ایکٹیو کرنا، ٹرمپ افغانستان Afghanistan سے نکلنے کیلئے ہم پر انحصار کر رہا، ہمیں اس کے بدلے کشمیر پر اس سے مدد لینی چاہئے اور خود ایک ہو کر متفقہ لائحہ عمل بنا کر، ملک ملک جاکر مودی جارحیت کو بے نقاب کرنا، یہ چومکھی لڑائی تب تک، جب تک مظلوم کشمیری بھائیوں کا معاملہ حل نہیں ہو جاتا، کیا بدنصیبی، امریکہ United States ، بھارت India کا نیوکلیئر پارٹنر،بھارت India دنیا کیلئے ایک بہت بڑی منڈی، بھارت India کی سفارتکاری ایسی جھوٹ بیچ دے، کیا بدنصیبی، ہم بھوکے ننگے، ہماری دنیا میں کوئی حیثیت نہ اہمیت، عالمی تنہائی، وزیر خارجہ وہ جو دوستوں کو روز بتائیں ’’میں تو وزیر خارجہ بننا ہی نہیں چاہتا تھا، مجھے تو عمران خان Imran Khan نے زبردستی وزیر خارجہ بنا دیا‘‘، سیاسی قیادت ایسی، گزشتہ روز فوج کی طرف سے سخت، مضبوط پیغام کے بعد جو ہماری پارلیمنٹ میں ہوا، سب کے سامنے، سفارتکاری ایسی، سچ نہ بیچ پائیں، پچھلے 5سالوں میں 56ارب خرچنے والے ہمارے سفارتکاروں کی گزشتہ 5سالہ کارکردگی ہی دیکھ لیں، کیا بدنصیبی، اب ہم لڑ کر شام، عراق، لیبیا تو بن سکتے ہیں، کشمیر حاصل نہیں کر سکتے، لڑ کر کشمیر لینے کے تین مواقع آئے، ہم ضائع کر چکے، اب لڑائی سفارتی محاذ پر ہی لڑنا ہوگی، ویسے کیا بدنصیبی ہے۔

 882