ملکی مجموعی صورتحال---

ملکی مجموعی صورتحال---

ملکی مجموعی صورتحال---

کالم نگار:حمزہ میر---

پاکستان کی موجودہ مثال اس ہرن کی طرح ہے جس کو جنگلی بھیڑیے کھانا چاہتے ہیں اور یہ بھیڑیے کچھ بیرونی ممالک ہیں جو پاکستان کو ایک مخصوص طریقے سے دنیا سے الگ کرنا چاہتے ہیں اور پاکستانی کی معشیت کو بھی ایک پورے طریقے کے تحت خراب کیا جا رہا ہے، ملک کے اندر ہی کچھ لوگوں کو پیسے دے کر ملک کے سیکورٹی اداروں کے خلاف کیا جا رہا ہے اور لوگ استعمال بھی ہو رہے ہیں پہلے بلوچستان میں لوگوں کو ملک کے خلاف استعمال کیا پیسے بانٹے اور انڈیا نے ایران کا راستہ استعمال کیا اور لوگوں تک پیسے پہنچائے براہمداد بگٹی، مگسی جیسے لوگوں کو پیسے دے کر ان سے الگ ریاست کا مطالبہ کروایا لیکن پاکستان کی خفیہ ایجنسی نے ان کو روکا اور ان لوگوں کو حکومت کے ساتھ مل کر سمجھایا اور کافی مظاہمت کے بعد بلا آخر اب وہ لوگ قومی داہرے میں شامل ہو گئے ہیں اسی طرح اب ایک مخصوص پشتون علاقے کے لوگوں کو ملک کے خلاف اکسایا جا رہا ہے اور پشتون تحفظ تحریک کا پرچم ان کے ہاتھ میں تھما دیا اور ان سے کام بھی لے رہے ہیں اور یہ جو وہ ایک نعرہ لگاتے ہیں یہ جو دہشتگردی ہے اس کے پیچھے وردی ہے یہ بھی ملک دشمن عناصر کا ہی دیا ہوا ہے لیکن ہمارے سیکورٹی ادارے ان ٖغدرا وطن لوگوں کے اصل مائی باپ تک پہنچ گئے ہیں اور موجودہ ڈی جی (آئی-ایس-پی-آر) میجر جنرل آصف غفور نے ایک اہم میڈیا بیٹھک کی اور تمام باتوں کا تفصیل سے بتایاکیسے اس جماعت کو بھارت اور را نے پیسے دیے اور اکاوئنٹ بھی بتائے- کچھ لوگ شاید میری اس بات کو مذاق سمجھے لیکن پاکستان کی معشیت کو ایک پوری سازش کے تحت خراب کیا جا رہا اور ڈالر کو بھی ایک پوری گیم کے تحت بڑھایا جا رہا ہے اس سب میں ایران کا رول اہم ہے کیونکہ ایران کی سرزمین کو بھارت اور امریکہ استعمال کر رہے ہیں ایران کو اس بات کو سمجھنا ہو گا کیونکہ 27 فروری کو پاکستان نے جب امریکہ کو اپنا پیغام پہنچایا تو جن 3 ممالک نے پیغام پہنچایا ان میں ترکی، چین اور سعودیہ شامل تھے کیونکہ چین بھی پاکستان کے ساتھ کھل کر آ گیا تھا اور جو باڈر انڈیا اور چین کا آپس میں ملتا ہے وہاں پر چین نے اپنی فوج مسلط کر دی تھی- معشیت ک تو عمرانی سرکار نے بیڑہ غرق کر دیا ہے بےروزگاری اپنی عروج پر ہے ڈالر کبھی 5 روپے اوپر جاتا ہے تو 2 روپے نیچھے آ جاتا ہے ابھی بھی ڈالر 151 سے لے کر 153 کے ڈرمیان ٹریڈ ہو رہا ہے تیل کی قیمتوں میں بھی اضافہ ہو رہا ہے مہنگائی میں بھی اضافہ ہو رہا ہے پاکستان کے غیر ملکی زرمبادلہ کے ذخائر 10 ہزار بلین ڈالر سے بھی کم ہو گئے ہیں اور بیرونی قرضہ 106 ارب ڈالر ہو گیا ہے ہر مہینے بعد پٹرول کی قیمت میں اضافہ ہو رہا ہے- سیاسی صورتحال بھی عجیب ہے دونوں بڑھی سیاسی جماعتیں کبھی ایک ہونے کی بات کرتی ہیں تو کبھی خاموش ہو جاتی ہیں افطار ڈنر میں بھی کوئی ایک اپنا لائہ عمل نہیں دے سکے اور بال مولانہ فضل الرحمان کے پاس چلی گئی اب عید کے بعد ہی کوئی سیاسی سیکرین صاف ہو گی دوسری طرف نیب چیرمین کے انٹرویو نے عجیب صورتحال پیدا کر دی ہے ان کی ایک بات جو عجیب ہے وہ یہ ہے کہ انہوں نے کہا نیب پر دباو ہے کہ لوگوں کو گرفتار نا کیا جائے اور انہوں نے کہا اگر نیب نے لوگوں کو گرفتار کیا تو حکومت فارغ ہو جائے گی ان کا اشارہ پرویز خٹک، خسرہ بختیار، فردوس عاشق اعوان، غلام سرور خان، وزیراعلی پختونخوا محمود خان کی طرف تھا لیکن اب دیکھتے ہیں کیا بنتا ہے کیونکہ جو باتیں نیب چیرمین نے بتائی ہیں وہ حیران کن ہیں کیونکہ ان کے بقول شریف خاندان پیسے دینے کے لیے راضی تھا اس بات کا ذکر میں بہت پہلے کر چکا ہوں کہ شریف خاندان بغیر اپنا نام لیے پیسے دینا چاہتا ہے اور سعودی ولی عہد اور رجیب طیب اردگان اس کام کو کروا رہے ہیں لیکن مزید دیکھتے ہیں کیا بنتا ہے---

 126