اجلاس میں عمران خان Imran Khan کے آس پاس کون بیٹھا؟

کس سے منصفی چاہیں - انصار عبا سی

22 اپریل 2019

ijlaas mein Imran Khan ke aas paas kon betha ?

گزشتہ ہفتے کابینہ میں اہم تبدیلیوں کے اعلان سے قبل وزیراعظم عمران خان Imran Khan پاور سیکٹر سے متعلق ایک اجلاس کی صدارت کر رہے تھے کہ اسی دوران ایک افسر کمیٹی روم میں داخل ہوا اور آکر اسٹاف کے ایک اعلیٰ افسر کے کان میں کچھ کھسر پھسر کی۔ اعلیٰ افسر اپنی نشست سے اُٹھے اور آکر وزیر اعظم Prime Minister عمران خان Imran Khan کے کان میں کوئی بات کی۔ جس پر وزیراعظم نے سرگوشی کے انداز میں انہیں جواب دیا۔ اس کے تھوڑی دیر بعد وزیراعظم جہاں بیٹھے تھے، اس کے دونوں اطراف میں ایک ایک کرسی لگا دی گئی۔ پھر دو اہم افراد کمیٹی روم میں داخل ہوئے اور وزیراعظم کے دونوں اطراف لگائی گئی کرسیوں پر براجمان ہو گئے۔ ذرائع کے مطابق نئے آنے والوں نے اجلاس کی کارروائی میں شرکت کرتے ہوئے حکومت کی کارکردگی سے متعلق کچھ ایسی سخت باتیں کیں کہ اجلاس میں شامل سرکاری افسران ہکا بکا رہ گئے۔ شرکت والے والی شخصیات کون تھیں، اس پر بات نہیں کرتے لیکن یہ بھی اطلاعات ہیں کابینہ میں کی گئی تبدیلیوں میں چند قومی اداروں کا بھی اہم کردار شامل ہے، جنہوں نے وزیراعظم کو چند ایک وزراء کے متعلق ڈوزئیرز بھی دیئے۔ ان ڈوزئیرز میں کچھ کرپشن کی بھی کہانیاں درج تھیں۔ میڈیا خصوصاً ٹی وی چینلز میں یہ سوال بہت اٹھایا جا رہا ہے کہ آیا یہ تبدیلیاں وزیراعظم عمران خان Imran Khan کی اپنی ذاتی خواہش پر ہوئیں یا کسی اور کے کہنے پر۔ ایک نجی ٹی وی چینل سے تعلق رکھنے والے پاکستان Pakistan کے ممتاز صحافی کامران خان صاحب نے اپنے ایک ٹویٹ میں نئے مشیرِ خزانہ کی تعیناتی سے قبل ہی یہ لکھ دیا تھا ’’وزارتِ خزانہ کس کو ملے، قرعہ ڈاکٹر حفیظ شیخ کے نام کھل رہا ہے، بتایا گیا ہے کہ ریس کے خاتمے کا فیصلہ اب سے تھوڑی دیر قبل آرمی چیف کی وزیراعظم سے ملاقات میں کیا گیا‘‘۔ جیسا کہ کامران خان نے لکھا، بالکل ویسے کچھ دیر بعد ، حکومت کی طرف سے اسد عمر کی جگہ ڈاکٹر حفیظ شیخ کو مشیرِ خزانہ بنانے کا باقاعدہ اعلان کر دیا گیا۔ دوسرے روز شام کو بیرونِ ملک مقیم ڈاکٹر حفیظ شیخ پاکستان Pakistan تشریف لائے اور اگلے دن وزیر اعظم Prime Minister عمران خان Imran Khan سے اپنی پہلی ملاقات کی اور وزارتِ خزانہ کے سربراہ کی حیثیت سے کام بھی شروع کر دیا۔ حفیظ شیخ کے آنے پر پاکستان Pakistan اسٹاک ایکسچینج نے پہلے دن مثبت ردعمل دیا۔ دیکھنا ہے اب آگے کیا ہوتا ہے اور پاکستان Pakistan کی معیشت اور کاروباری حالات بہتری کی طرف گامزن ہوتے ہیں یا مشکلات میں ہی گھرے رہتے ہیں۔

اطلاعات یہ بھی مل رہی ہیں کہ وزیراعظم عمران خان Imran Khan کی طرف سے ندیم بابر کو اپنا معاونِ خصوصی برائے پیٹرولیم بنائے جانے پر سب خوش نہیں اور ممکنہ طور پر یہ تعیناتی واپس بھی لی جا سکتی ہے۔ کہا جا رہا ہے کہ وزیرِ پانی و بجلی عمر ایوب کو وزارتِ پیٹرولیم کا اضافی چارج دیئے جانے کا مقصد ندیم بابر کو فارغ کرنا ہو سکتا ہے۔ ندیم بابر کے متعلق میڈیا میں کہا اور لکھا جا رہا ہے کہ اُن کی تقرری مفادات کے ٹکرائو کے ضمن میں آتی ہے۔ نہ صرف یہ کہ وہ مبینہ طور پر ڈیفالٹر ہیں بلکہ اورینٹ پاور کمپنی کے شیئر ہولڈر بھی ہیں اور یہ اعتراض ایک اہم حکومتی ایجنسی کی طرف سے بھی اُٹھایا گیا ہے۔ البتہ ندیم بابر کا کہنا ہے کہ مقامی عدالت کے فیصلہ دینے سے قبل اُن کی کمپنی کو ڈیفالٹر قرار نہیں دیا جا سکتا۔ خبروں کے مطابق اورینٹ پاور سوئی ناردرن کی سب سے بڑی ڈیفالٹر کمپنی ہے۔ کئی لوگوں کا خیال ہے کہ وزیراعظم نے اپنی ٹیم میں جو تبدیلیاں کیں، اُس کے بعد بھی اگر حکومت کی کارکردگی بہتر نہ ہوئی اور خصوصی طور پر معیشت اور کاروبار کے حالات بہتر نہ ہوئے تو عمران خان Imran Khan کے اپنے لیے مشکلات بہت بڑھ سکتی ہیں۔ کہا جا رہا ہے کہ ابتدائی طور پر اسد عمر کو بجٹ کے بعد وزارتِ خزانہ سے فارغ کیے جانے کا فیصلہ کیا گیا تھا لیکن جلدی کرنا پڑی۔

وزیراعلیٰ پنجاب کے بارے میں بھی اہم لوگوں کو سخت شکایات ہیں اور فیصلہ کے مطابق صوبہ پنجاب کے بجٹ کے پاس ہونے کے بعد عثمان بزدار جو عمران خان Imran Khan کے وسیم اکرم پلس ہیں، کو بھی اس عہدہ سے فارغ کر دیا جائے گا۔ بہت سوں کے مطابق فواد چوہدری تو تحریک انصاف کا بہت اچھا دفاع کر رہے تھے تو اُنہیں وزارتِ اطلاعات سے نکالے جانے کی کیا وجہ تھی؟ اطلاعات کے مطابق اگرچہ فواد چوہدری صاحب کا اپوزیشن کے متعلق وہی لہجہ تھا جو وزیراعظم عمران خان Imran Khan کا ہے لیکن اس رویے سے سب خوش نہیں کیونکہ دن رات کی حکومت اپوزیشن کی لڑائی سے سیاسی عدم استحکام پیدا ہوتا ہے جس کا کاروبار اور معیشت پر بہت بُرا اثر پڑتا ہے۔ نئی مشیرِ اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے تو اپنے پہلے ہی اخباری بیان میں مصالحت کی پالیسی کی بات کی اور کہا کہ اپوزیشن کے بغیر پارلیمنٹ اور جمہوریت نہیں چل سکتی۔ اب وقت بتائے گا کہ کابینہ میں ان تبدیلیوں کے بعد عمران خان Imran Khan اور اُن کی حکومت کے رویہ میں بھی کوئی تبدیلی نظر آتی ہے کہ جس سے سیاسی استحکام اور معیشت کی ترقی کے لیے بہتر ماحول پیدا ہو، تاہم اگر ایسا نہ ہوا تو پھر گڑبڑ ہی ہوگی۔

 159