موجودہ رویوں کا نتیجہ؟

زیر بحث - عارف نظامی

28 جنوری 2019

mojooda rawaiyon ka nateeja ?

حکومت اور اپوزیشن کے درمیان بڑھتی ہوئی مخاصمت نے90کی دہائی کی محاذ آرائی کے زخم تازہ کر دیئے ہیں، دعا کرنی چاہیے کہ نتیجہ بھی ویسا ہی نہ نکلے ۔ وزیراعظم عمران خان Imran Khan اور ان کے کھلاڑی ابھی تک کنٹینر سے نہیں اتر پائے، شاید انھیںاحساس ہی نہیںکہ اب وہ حکومت میں ہیں‘ اس لئے اپوزیشن کو آن بورڈ لینے کی زیادہ ذمہ داری ان کے کندھوں پر ہے لیکن اس بارے میں دیوار سے لگی اپوزیشن بھی کچھ کم قصور وار نہیں ہے ۔ وزیرخزانہ اسد عمر جب تحریک انصاف کی ساڑھے پانچ ماہ کی حکومت کا دوسرا منی بجٹ پیش کر رہے تھے،ان سے قبل اپوزیشن لیڈر شہبازشریف نے غیر ضروری طور پر انتہائی سخت تقریرکی اور یہ طنزیہ فقرہ کہہ گئے کہ سلیکٹیڈ وزیراعظم کو بالآخر ساڑھے تین ماہ بعد ایوان میں آنے کی توفیق ہوئی۔ اس وقت تو عمران خان Imran Khan اس تندو تیز حملے کو پی گئے اور کوئی جواب نہ دیا لیکن بعدازاں ان کے خصوصی حواری نعیم الحق نے یہ ٹویٹ کر کے کہ ضیاء الحق Zia ul Haq کی ناجائز پیداوار شہبازشریف کے پروڈکشن آرڈر واپس لے لیے جائیں گے، سیاسی ٹمپریچر کو مزید بڑھا دیا۔حالانکہ موصوف کو علم ہونا چاہیے کہ پروڈکشن آرڈر سپیکر کی طرف سے جاری ہوتے ہیں اور یہ حکومت کی صوابدید نہیں ہے ۔بجٹ تقریر کے دوران منی بجٹ کے ڈاکومنٹ پھاڑ کر اپوزیشن نے ہوا میں لہرائے اور اسد عمر کی تقریر کے دوران ’گو نیازی گو ‘کے نعرے اسی طرح لگائے جیسے نوازشریف کی فرمائش پر بے نظیر بھٹو نے اس وقت کے صدر غلام اسحق خان کے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کے دوران’گو بابا گو‘ کے لگائے تھے ۔جمعہ کو قومی اسمبلی کے اجلاس میں اپوزیشن اور حکومت کے درمیان اس طرح گولہ باری ہوئی کہ منی بجٹ منظور کیے بغیر ہی اسمبلی کا اجلاس ملتوی کر دیاگیا ۔ اپوزیشن ارکان بھی جوش خطابت میں اس حد تک چلے گئے کہ اگر اپوزیشن لیڈر ایوان میںنہ آ سکے تو قائد ایوان بھی نہیں آ سکیں گے ۔ تحریک انصاف کے ارکان نے ترکی بہ ترکی جواب دیا کہ شہباز شریف Shehbaz Sharif کو اسمبلی میں نہیں ،جیل میں ہونا چاہیے حالانکہ برادر اول سمیت تکنیکی طور پر وہ بھی اب جیل میںہیں ۔خواجہ برادران سعد رفیق اور سلمان رفیق بھی نیب کی حراست میں ہیں اور آصف زرداری ان کی ہمشیرہ فریال تالپور کا حال یہ ہے کہ ہر چند ہیں کہ نہیں۔اپوزیشن کی طرف سے اجلاس میں بہت سخت قسم کی باتیں کہی گئیں ۔ وزیر اطلاعات فواد چودھری کا کہنا تھا کہ پاکستان Pakistan کو نہیں سندھ کے زرداروں کو خطرہ ہے، ان کے مطابق وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کو صوبائی اسمبلی میں دل کا دورہ پڑا تھا اور ان کی حالت ڈوبتی ہوئی لومڑی کی طرح ہے ۔ یہ ریمارکس اس لحاظ سے محل نظر ہیں کہ جس طرح عمران خان Imran Khan منتخب وزیراعظم ہیں اسی طرح مراد علی شاہ سندھ کے عوام کی چوائس ہیں ۔ وزیر ریلویز شیخ رشید جو اچکنوں کی طرح پارٹیاں بدلتے رہے ہیں، سمجھتے ہیںکہ ان سے پوتر شخص قومی اسمبلی میں کوئی نہیں ،ان کے مطابق شہباز شریف Shehbaz Sharif کو لیڈر آف اپوزیشن بنانا بلے کو دودھ کی رکھوالی پر بٹھانے کے مترادف ہے ۔ چوروں اور ڈاکوؤں کو اسمبلی میں سب سے پہلے بولنے کی اجازت دی جا رہی ہے ۔ وزیر ریلویز اور اس قسم کے بہت سے خواتین وحضرات کا طرز عمل یہ ہے کہ شریف برادران چور اور ڈاکو ہیں، ان کو الٹا لٹکا دیا جائے۔ شیخ رشیدکا یہ بھی کہنا ہے کہ منسٹر انکلیو میں جہاں وزرا رہتے ہیں وہیں ایک چور بھی مقیم ہیں۔ نمبر بنانے کے لیے تو یہ باتیں ٹھیک لگتی ہیں لیکن اپوزیشن کے جو ارکان منتخب ہوئے ہیں ان کا بھی بطور رکن اسمبلی کچھ استحقاق ہے ۔پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے سربراہ کو بھی بعض سہولتیں حاصل ہیں ، جن میں منسٹر انکلیو میں ایک مکان بھی شامل ہے ۔دلچسپ بات یہ ہے کہ پیپلزپارٹی اس طرح کی سخت زبان استعمال نہیں کر رہی۔شیخ صاحب اپنی ون مین تانگہ پارٹی کی طرف سے واحد رکن قومی اسمبلی ہیں، وہ کس کے ایما پر سب کچھ کہہ رہے ہیں؟ ۔لگتا ہے مسلم لیگ (ن) بھی صبر کا دامن چھوڑ چکی ہے ۔اور اس کے ایک حصے میں غالباً یہ سوچ ابھر رہی ہے اگر کھلونا اسے نہ ملا تو وہ کسی کو بھی نہیں کھیلنے دے گی ۔شیخ رشید تواس لحاظ سے قابل معافی ہیں کہ ان کا قبلہ و کعبہ بقول ان کے پنڈی رہا ہے ۔ کیا مسلم لیگ (ن) بھی اپنے رویئے سے جمہوریت اور جمہوری اداروں کو سبوتاژ کرنا چاہتی ہے ۔ اسے یاد رکھنا چاہیے کہ بھاری مینڈیٹ سے سرشار وزیراعظم میاں نواز شریف Nawaz Sharif اپنے دوسرے دور وزارت عظمیٰ میں امیرالمومنین بننے کے خواب دیکھ رہے تھے تو پرویزمشرف نے ’کو ‘کر کے ان کے خوابوں کو چکناچور کر دیا تھا۔ پرویزمشرف کے اس اقدام کا محترمہ بے نظیر بھٹو اور نوابزادہ نصر اللہ خان جیسے جمہوریت پسند قائدین نے بھی خیر مقدم کیا تھا اور بعدازاں اسی پرویزمشرف کے خلاف انھیں سڑکوں پر نکلنا پڑا۔ عمران خان Imran Khan تواس وقت بھی پرویزمشرف کے ساتھ وزیراعظم بننے کو تیار تھے۔ بیس برس سے زائد عرصہ سے سیاست میں ہونے کے بعد انھیں بھی ادراک ہونا چاہیے کہ محاذ آرائی کا انجام کیا ہوتا ہے۔ 90ء کی دہائی کی سیاست کی جیتی جا گتی تصویر موجودہ حکومت کا میڈیا کے بارے میں رویہ ہے۔ اخباری ایڈیٹرز کی تنظیم سی پی این ای کے تحفظات کے باوجود کابینہ نے پا کستان میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی کے قیام کی منظوری دے دی ہے جس کا بظاہر مقصد میڈیا کے لیے ون ونڈو آپریشن کے قیام کی منظوری ہے ۔سی پی این ای کا یہ مطالبہ ہے کہ اس قسم کے بظاہر کالے قانون کو نافذ نہیں کرنا چاہیے بلکہ سٹیک ہولڈرز کے ساتھ مشاورت کرنی چاہیے ۔ حکومت اسے یکطرفہ طور پر نافذ کرنا چاہتی ہے۔ جب یہ قانون اسمبلی میں آیا تو اس پر خاصی لے دے ہو گی کیونکہ سی پی این ای نے تو اسے پہلے ہی مسترد کر دیا تھا ،اب اخباری مالکان کی تنظیم اے پی این ایس نے بھی اسے قبول کرنے سے انکار کر دیا ہے لہٰذا اس قانون کا منظور ہونا آسان نظر نہیں آتا ،نہ جانے حکومت یہ پنگا کیوں لینا چاہتی ہے ۔غالبا ً ان کی دانست میں نوازشریف کے دور میں سارا میڈیا ان کا حامی تھا جبکہ تحریک انصاف تن وتنہا اپنی جدوجہد کے ذریعے برسر اقتدار آئی ہے ۔لیکن حقیقت بالکل اس کے بر عکس ہے ،کئی چینلز اوراخبار تو کھلم کھلا نوازشریف کے خلاف تھے ،نہ صرف انھوں نے بلکہ تمام میڈیا نے عمران خان Imran Khan کے دھرنوں ،پریس کانفرنسوں اور جلسوں کو لائیو کوریج دی ۔میڈیا میں یہ احساس اب جاگزین ہو گیا ہے کہ موجودہ حکومت اینٹی میڈیا ہے اور اقتصادی طور پر اور آزادی اظہار کے حوالے سے بھی اسے مطعون کرنا چاہتی ہے ۔فواد چودھری صاحب میڈیا کو واکھیان دیتے رہتے ہیں کہ اپنا بزنس ماڈل درست کریں لیکن جب میڈیا ان سے کہتا ہے کہ اپنی حکومت کا بزنس ماڈل تو درست کر لیں پھر ہماری فکر کیجیے، تو انھیں اچھا نہیں لگتا ،اسی رویے کی غمازی وزیر خزانہ اسد عمر کی منی بجٹ تقریر اور بعدازاں پر یس کانفرنس کرتی ہے جن میں ان کا یہ کہنا کہ میڈیا ان کے بارے میں منفی رویہ رکھتا ہے اور ٹاک شوزاور اداریوں میں صورتحال خراب بتائی جاتی ہے حالانکہ زمینی حقائق مختلف ہیں اور سب اچھا ہے۔ پی ایم آر اے ایک عجیب قسم کی مخلوق ہو گی جو نہ جانور ہو گی اور نہ انسان ۔ پرنٹ میڈیا کی ساری جدوجہد اسی ایک نکتے پر ہے کہ ان کے لیے کوئی خصوصی قانون نہیں ہونا چاہیے بلکہ ان کا مواخذہ ملک میں رائج قوانین کے تحت ہی کیا جائے۔ یہ سی پی این ای اور دیگر صحافتی تنظیموںکی ہی جدوجہد تھی جس کے نتیجے میں ایوب دور کا بدنام زمانہ پریس اینڈ پبلیکیشنز آرڈیننس ختم ہوا جس کے بعد اخبارات نکالنے کا عمل بھی سہل ہو گیا۔ جہاں تک پریس کونسل کا تعلق ہے اس کے چیئرمین پہلے ہی پیمرا کو آزادی صحافت کے منافی قرار دے چکے ہیں کیونکہ پریس کونسل سیلف ریگولیٹری باڈی ہے، اس کو ریگولیٹری باڈی کے ساتھ نتھی کرنا چہ معنی دارد؟۔ اگر یہ سب کچھ حکومت کی بدنیتی نہیں تو پھر اسے جہالت ہی قرار دیا جا سکتاہے ۔ حکومت اور اپوزیشن دونوں کو نوشتہ دیوار پڑھ کر جمہوریت اور جمہوری اداروں کی آبیاری کرنی چاہیے نہ کہ ان کی نفی کیونکہ موجودہ رویوں کا نتیجہ خوفناک بھی ہوسکتا ہے ۔

 206